Abasa( عبس)
Original,King Fahad Quran Complex(الأصلي,مجمع الملك فهد القرآن)
show/hide
Tahir ul Qadri(طاہر القادری)
show/hide
بِسمِ اللَّهِ الرَّحمٰنِ الرَّحيمِ عَبَسَ وَتَوَلّىٰ(1)
ان کے چہرۂ (اقدس) پر ناگواری آئی اور رخِ (انور) موڑ لیا،(1)
أَن جاءَهُ الأَعمىٰ(2)
اس وجہ سے کہ ان کے پاس ایک نابینا آیا (جس نے آپ کی بات کو ٹوکا)،(2)
وَما يُدريكَ لَعَلَّهُ يَزَّكّىٰ(3)
اور آپ کو کیا خبر شاید وہ (آپ کی توجہ سے مزید) پاک ہو جاتا،(3)
أَو يَذَّكَّرُ فَتَنفَعَهُ الذِّكرىٰ(4)
یا (آپ کی) نصیحت قبول کرتا تو نصیحت اس کو (اور) فائدہ دیتی،(4)
أَمّا مَنِ استَغنىٰ(5)
لیکن جو شخص (دین سے) بے پروا ہے،(5)
فَأَنتَ لَهُ تَصَدّىٰ(6)
تو آپ اس کے (قبولِ اسلام کے) لیے زیادہ اہتمام فرماتے ہیں،(6)
وَما عَلَيكَ أَلّا يَزَّكّىٰ(7)
حالانکہ آپ پر کوئی ذمہ داری (کا بوجھ) نہیں اگرچہ وہ پاکیزگی (ایمان) اختیار نہ بھی کرے،(7)
وَأَمّا مَن جاءَكَ يَسعىٰ(8)
اور وہ جو آپ کے پا س (خود طلبِ خیر کی) کوشش کرتا ہوا آیا،(8)
وَهُوَ يَخشىٰ(9)
اور وہ (اپنے رب سے) ڈرتا بھی ہے،(9)
فَأَنتَ عَنهُ تَلَهّىٰ(10)
تو آپ اُس سے بے توجہی فرما رہے ہیں،(10)
كَلّا إِنَّها تَذكِرَةٌ(11)
(اے حبیبِ مکرّم!) یوں نہیں بیشک یہ (آیاتِ قرآنی) تو نصیحت ہیں،(11)
فَمَن شاءَ ذَكَرَهُ(12)
جو شخص چاہے اسے قبول (و اَزبر) کر لے،(12)
فى صُحُفٍ مُكَرَّمَةٍ(13)
(یہ) معزّز و مکرّم اوراق میں (لکھی ہوئی) ہیں،(13)
مَرفوعَةٍ مُطَهَّرَةٍ(14)
جو نہایت بلند مرتبہ (اور) پاکیزہ ہیں،(14)
بِأَيدى سَفَرَةٍ(15)
ایسے سفیروں (اور کاتبوں) کے ہاتھوں سے (آگے پہنچی) ہیں،(15)
كِرامٍ بَرَرَةٍ(16)
جو بڑے صاحبانِ کرامت (اور) پیکرانِ طاعت ہیں،(16)
قُتِلَ الإِنسٰنُ ما أَكفَرَهُ(17)
ہلاک ہو (وہ بد بخت منکر) انسان کیسا نا شکرا ہے (جو اتنی عظیم نعمت پا کر بھی اس کی قدر نہیں کرتا)،(17)
مِن أَىِّ شَيءٍ خَلَقَهُ(18)
اللہ نے اسے کس چیز سے پیدا فرمایا ہے،(18)
مِن نُطفَةٍ خَلَقَهُ فَقَدَّرَهُ(19)
نطفہ میں سے اس کو پیدا فرمایا، پھر ساتھ ہی اس کا (خواص و جنس کے لحاظ سے) تعین فرما دیا،(19)
ثُمَّ السَّبيلَ يَسَّرَهُ(20)
پھر (تشکیل، ارتقاء اور تکمیل کے بعد بطنِ مادر سے نکلنے کی) راہ اس کے لئے آسان فرما دی،(20)
ثُمَّ أَماتَهُ فَأَقبَرَهُ(21)
پھر اسے موت دی، پھر اسے قبر میں (دفن) کر دیا گیا،(21)
ثُمَّ إِذا شاءَ أَنشَرَهُ(22)
پھر جب وہ چاہے گا اسے (دوبارہ زندہ کر کے) کھڑا کرے گا،(22)
كَلّا لَمّا يَقضِ ما أَمَرَهُ(23)
یقیناً اس (نافرمان انسان) نے وہ (حق) پورا نہ کیا جس کا اسے (اللہ نے) حکم دیا تھا،(23)
فَليَنظُرِ الإِنسٰنُ إِلىٰ طَعامِهِ(24)
پس انسان کو چاہیے کہ اپنی غذا کی طرف دیکھے (اور غور کرے)،(24)
أَنّا صَبَبنَا الماءَ صَبًّا(25)
بیشک ہم نے خوب زور سے پانی برسایا،(25)
ثُمَّ شَقَقنَا الأَرضَ شَقًّا(26)
پھر ہم نے زمین کو پھاڑ کر چیر ڈالا،(26)
فَأَنبَتنا فيها حَبًّا(27)
پھر ہم نے اس میں اناج اگایا،(27)
وَعِنَبًا وَقَضبًا(28)
اور انگور اور ترکاری،(28)
وَزَيتونًا وَنَخلًا(29)
اور زیتون اور کھجور،(29)
وَحَدائِقَ غُلبًا(30)
اور گھنے گھنے باغات،(30)
وَفٰكِهَةً وَأَبًّا(31)
اور (طرح طرح کے) پھل میوے اور (جانوروں کا) چارہ،(31)
مَتٰعًا لَكُم وَلِأَنعٰمِكُم(32)
خود تمہارے اور تمہارے مویشیوں کے لئے متاعِ (زیست)،(32)
فَإِذا جاءَتِ الصّاخَّةُ(33)
پھر جب کان پھاڑ دینے والی آواز آئے گی،(33)
يَومَ يَفِرُّ المَرءُ مِن أَخيهِ(34)
اُس دن آدمی اپنے بھائی سے بھاگے گا،(34)
وَأُمِّهِ وَأَبيهِ(35)
اور اپنی ماں اور اپنے باپ سے (بھی)،(35)
وَصٰحِبَتِهِ وَبَنيهِ(36)
اور اپنی بیوی اور اپنی اولاد سے (بھی)،(36)
لِكُلِّ امرِئٍ مِنهُم يَومَئِذٍ شَأنٌ يُغنيهِ(37)
اس دن ہر شخص کو ایسی (پریشان کن) حالت لاحق ہوگی جو اسے (ہر دوسرے سے) بے پروا کر دے گی،(37)
وُجوهٌ يَومَئِذٍ مُسفِرَةٌ(38)
اسی دن بہت سے چہرے (ایسے بھی ہوں گے جو نور سے) چمک رہے ہوں گے،(38)
ضاحِكَةٌ مُستَبشِرَةٌ(39)
(وہ) مسکراتے ہنستے (اور) خوشیاں مناتے ہوں گے،(39)
وَوُجوهٌ يَومَئِذٍ عَلَيها غَبَرَةٌ(40)
اور بہت سے چہرے ایسے ہوں گے جن پر اس دن گرد پڑی ہوگی،(40)
تَرهَقُها قَتَرَةٌ(41)
(مزید) ان (چہروں) پر سیاہی چھائی ہوگی،(41)
أُولٰئِكَ هُمُ الكَفَرَةُ الفَجَرَةُ(42)
یہی لوگ کافر (اور) فاجر (بدکردار) ہوں گے،(42)